تراویح کے حفاظ کی اپنی اپنی شناخت

National

 تراویح کے حفاظ کی اپنی اپنی شناخت

حافظ محمد سمیر نظام نے متھراعیدگاہ میں امامت کے فرائض انجام دیئے اور صادق رضا کے امامت کے 32 سال مکمل ہوئے

ممبئی،13اپریل(یواین أئی)

ممبئی میں ماہ رمضان میں ملک بھر سے نمازتراویح کے لیے  حفاظ کرام تشریف لاتے ہیں،ان  کی اپنی الگ الگ  شناخت ہیں،کہیں کہیں باپ بیٹے،بھائی بھائی ،عوامی نمائندے بھی امامت کے فرائض انجام دے رہے ہیں تو بہت سے ایسے ہیں جو تاریخی مساجد میں یہ فرائض ادا کر کے ہیں،ان میں حافظ محمد سمیر نظام الدین کو یہ شرف حاصل ہے کہ انہوں  نے متھراکی شاہی عیدگاہ اور مسجد  میں نماز تراویح کی امامت کی ہے،جبکہ فتح پور سیکری میں بھی انہوں نے امامت کی ہے۔

حافظ محمد سمیر نظام الدین کا آبائی وطن اتر پردیش کا شہر متھرا ہے،انہوں نے ابتدائی تعلیم کے بعدمرحوم  والد نظام الدین اور والدہ مرحومہ عذرا کی خواہش کے مطابق حفظ کے لیے نئی دہلی کے مدرسہ درالنور میں داخلہ لیا اور  عالمیت کی ابتدائی تعلیم الجامعتہ القادریہ رچھا بریلی شریف میں ہوئی اور عالم اور پھرفاضل کی مکمل تعلیم الجامعتہ القادریہ اشرفیہ چھوٹا سونا پور الحاج معین الدین اشرف معین میاں کے مدرسہ میں ہوئی ہے۔

متھرا میں واقع شاہی عیدگاہ مسجد میں سال 2017-2018 میں نماز تراویح کی امامت کا انہیں شرف حاصل ہوا۔محمد سمیر ماہ رمضان 2018 میں جب تراویح میں قرآن مجید سنارہے تھے،تو انہیں ان کی والدہ کے انتقال کی خبر پہنچی،لیکن انہوں نے تراویح مکمل کی اور اس کے بعد ہی گھر گئے۔امسال 2018 میں ہی ماہ رمضان میں دس روز بعد ان کےوالد صاحب نظام الدین بھی اللہ کو پیارے ہوگئے۔والدین کی رحلت کے بعد حافظ سمیر نے ممبئی کارخ کیا اور شہر کی کئی مساجد میں بچوں کو دینی تعلیم دیتے رہے۔شیخ مصری مسجد میں امامت کر کے ہیں،اور تراویح بھی پڑھائی ہے،دوسال بعد ایک نجی ادارہ کے زیر اہتمام منعقدہ نماز تراویح کی امامت کررہے ہیں۔بچوں کوعربی اور قرآن پڑھاتے ہیں۔کئی اداروں سے وا بستہ ہیں۔

انٹاپ ہل حضرت محی الدین بھٹکلی شاہ مسجد کے امام شاہد خان کے نائب امام صادق رضاخان بھی تقریباً 32سال سے نہ صرف امامت فرمارہے ہیں ،بلکہ تراویح بھی پڑھاتے ہیں اور انہوں نے اپنے مخلصانہ اور کم گوئی سے اپنی ایک الگ پہنچان بنالی ہے۔

کشن۔گنج۔بہار سے تعلق رکھنے والے حافظ صادق پچھلی تین دہائیوں سے ممبئی میں ہی مقیم ہیں اور مولاناشاہد کی علالت کے سبب ایک اچھے منتظم کی طرح مسجد اور مدرسہ کی دیکھ بھال اور نگرانی بخوبی کررہے ہیں۔

ان کہناہے کہ ماہ رمضان میں بھی ان کا معمول عام دنوں کی طرح سے رہتا ہے،لیکن دوپہر کے اوقات میں آرام وغیرہ کے سلسلہ میں معمولی سی تبدیلی واقع ہوتی ہے۔مدرسہ میں تعطیل کی وجہ سے کچھ راحت رہتی ہے،مگر دیگر امور میں مصروفیت بڑھ جاتی ہے ۔اس کے ساتھ ساتھ تراویح کے لیے قرآن کادوران بھی شامل ہے،جس کے لیے نماز عصر کے بعد وقت نکالنا پڑتا ہے۔ فی الحال ان کے پاس دوہری ذمہ داری ہے،اس کے ساتھ ہی وہ بھٹکلی شاہ مزار کے احاطہ میں واقع گراؤنڈ میں ہونے والی تقریب پر بھی توجہ دیتے ہیں۔مولاناصادق رضا ایک سادگی پسند اور کم سخن انسان ہیں،اپنے معاملات کو بڑی ذمہ داری سے اداکرتے ہیں۔