جو علم قرب خداوندی کا ذریعہ ہو ایسے علم کے حصول کی سعی و کوشش کرتے رہنا چاہئے

Maharashtra

جو علم قرب خداوندی کا ذریعہ ہو ایسے علم کے حصول کی سعی و کوشش کرتے رہنا چاہئے

  اکولہ کے دہی ہنڈہ میں منعقدہ دینی تعلیمی بیداری مہم اجلاس سے حضرت مولانا محمود علی مظاہر ی اور مفتی روشن قاسمی کا خطاب

 
 
اکولہ ۔26؍ مارچ 2022 ( پریس ریلیز ) علم کا حاصل کرنا ہر مسلمان مرد و عورت پر فرض ہے۔ جس کی شروعات ہمیں بچپن ہی سے کردینی چاہیے۔ ہمارے اسلاف نے دینی تعلیم کا منظم و مستقل طریقۂ کار مہیا کیا تھا۔ جس کے بے شمار فوائد و مثبت اثرات سے آج تک پوری دنیا فیضیاب ہورہی ہے،چاہے وہ دینی علم ہو یا دنیاوی علوم و فنون ہو ان خیالات کا اظہار حضرت مولانا محمود علی مظاہری صاحب شیخ الحدیث امان الاسلام اکولہ نے مرکز مسجد دہی ہنڈہ اکولہ میں منعقدہ دینی تعلیمی بیداری مہم اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔انہوں نے مزید کہا کہ  ہمیں خود بھی اور ہمارے اہل و عیال نونہالوں کو بھی "علم نافع سیکھنا چاہیے۔ جو انسان میں اخلاقی اقدار پیدا کرے۔ ایسا علم انسان میں انسانوں کی خدمت کا جذبہ پیدا کرے۔ جو ہمیں تہذیب و تمدن، ثقافت اور مثبت رویوں کے ساتھ ہی حق و باطل میں، سچ و جھوٹ میں، صحیح و غلط میں، مغز و پوست میں تمیز کرنا سکھائے۔ ایسا علم جو اللہ ربّ العزت کی ربوبیت، وحدانیت اور اس کی تخلیقات سے روشناس کرائے۔ ایسا علم جو رضائے الٰہی کا سبب ہو۔ جو قرب خداوندی کا ذریعہ ہو۔ ایسے علم کے حصول کی ہمیں سعی و کوشش کرتے رہنا چاہیے۔

اجلاس کے مہمان خصوصی مفتی محمد روشن قاسمی صاحب ( صدر جمعیۃ علماء دینی تعلیمی بورڈ جمعیۃ علماء مہاراشٹر ) نے دینی تعلیم خصوصا علاقوں میں مکاتب اسلامیہ کی تعلیم کی طرف شرکاء کی توجہ مبذول کراتے ہوئے فرمایا کہ گذشتہ دو مہینوں سے جمعیۃ علماء مہا راشٹر کے صدر مولانا حافظ محمد ندیم صدیقی صاحب کی ہدایت کے مطابق مہاراشٹر کے تمام ضلعوں،تحصیلوں اور گاؤں گاؤں جمعیۃ علماء مہاراشٹر کی نگرانی میں دینی تعلیمی بیداری مہم کے پروگرام کامیابی کے ساتھ منعقد کئے جا رہے ہیں جس میں دینی تعلیم کی اہمیت اور ضرورت کے بارے میں مسلم معاشرے میں بیداری پیدا کرنے کی غرض سے دینی تعلیمی بیداری مہم ،گھر گھر پہنچ کر مسلم آبادی کا تعلیمی سروے ، مکاتب کے قیام کی فکر یں دلائی جا رہی ہیں ۔

  
 
مفتی صاحب نے مزید کہا کہ آج کے اس ترقیاتی دور میں بھی روز بہ روز نئی نئی ایجادات ہورہی ہیں۔ آئے دن ایک سے بڑھ کر ایک سہولیات کی چیزیں دستیاب ہورہی ہیں‌۔ لیکن تعلیم کا نہ کوئی متبادل آج تک پیدا ہو ہےا اور نہ ہی مستقبل میںا ہوگا۔ اس لیے ہمیں دین و دنیا کی ترقی و کامیابی کے حصول کے لیے تعلیم حاصل کرنا ہی ہوگا۔ تعلیم انسان کا بیش قیمت زیور ہے۔ تعلیم انسان کو صحیح معنوں میں انسان بناتی ہے۔تعلیم ہی اندھیری راہوں کو روشن کرتی ہے۔ علم نے ہی انسانیت کو اس کا مقام عطا کیا ہے۔ انسان کو شرف و منزلت تعلیم نے ہی بخشا ہے۔ تعلیم نے بدترین خلائق کو بہترین خلائق بنایا۔ چنانچہ انسان کو اپنے مقصد کے حصول کے لیے تعلیم و تربیت حاصل کرنا انتہائی لازمی و ضروری ہے۔مولانا محمد صابر صاحب امام مرکز مسجد دہی ہنڈہ نے اجلاس کی کاروائی چلاتے ہوئے مہمانوں اور تمام شرکاء اجلاس کا شکریہ ادا کیا ،اجلاس میں علاقے کے علماء کرام ،ائمہ مساجد ،ذمہ داران مساجد اور عوام بڑی تعداد میں شریک تھے ۔