غیر فعال وزیر رابطہ کی وجہ سے کسانوں پر احتجاج کا وقت۔۔سلیم جہانگیر

Beed

غیر فعال وزیر رابطہ کی وجہ سے کسانوں پر احتجاج کا وقت۔۔سلیم جہانگیر

 

پنکجہ تائی کے دور میں کسانوں کو  ہزاروں کروڑ کا بیمہ ملا تھا

 

بیڑ (رئیس خان فتح آبادی) زیادہ برسات کی وجہ سے فصلوں کا سو فیصد نقصان ہوا ہے جس کی وجہ سے ہاتھ اور منہ کو آئے ہوئی گھاس سے محروم رہنا پڑا ہے۔ ایسے حالات میں ضلع کے وزیر رابطہ کے طور پر وزیر رابطہ اور حکومت کسانوں کو زیادہ سے زیادہ معاوضہ حاصل کرنے کا راستہ تلاش کرنے کی کوشش کرنا چاہیئے۔ لیکن آج  فصل کو صحیح حق بیمہ مِلنے کے لئے کسانوں کو احتجاج کرنے کا وقت آگیا ہے۔یہ قسم انتہائی افسوسناک ہے اور یہ غیر فعال  وزیر رابطہ کی وجہ سے ہے کہ آج کسانوں پر یہ وقت آیا ہےاس طرح کا بیان بھارتی جنتا پارٹی کے لیڈر سلیم جہانگیر نے دیا ہے۔بیڑ ضلع میں  2020 اور 2021کا فصل بیمہ ابھی تک نہیں مِلا ہے۔کسانوں نے ابھی تک کئی مرتبہ انتظامیہ کو میمورنڈم دیئے ہیں کئی مرتبہ احتجاج بھی کیا ہے پھر بھی ابھی تک کسانوں کو فصل بیمہ کی رقم نہیں ملی ہے جِس کی وجہ سے کسانوں کو دیہات دیہات راستوں پر اُتر کر احتجاج کیا۔پنکجہ تائی بیڑ ضلع کی وزیر رابطہ ہوتے ہوئے ہزاروں  روپیوں کا فصل بیمہ کسانوں کو منظور کیا تھا۔رقم بھی براہ راست ان کے اکاؤنٹ میں منتقل کی جا رہی تھی۔پانچ سالوں میں کسانوں پر بینک جانے اور گھومنے پھرنے کا وقت کبھی نہیں آیا لیکن آج اقتدار والوں کی ہتھکڑیاں پالیسیوں کی وجہ سے زیادہ تر کسانوں کو فصل بیمہ کا ایک روپیہ بھی نہیں ملا. آج حکومت کے پاس کسانوں کے مسائل کا خیال رکھنے اور انہیں انصاف دلانے کا طریقہ کار ضلع میں موجود  نہیں ہے۔ وزیر رابطہ کا اپنی بے عملی کے باعث انتظامیہ پر کوئی کنٹرول نہیں ہے۔ان کی بے عملی کی وجہ سے آج کسانوں پر یہ وقت آیا ہے۔اگر حالات ایسے ہی رہے تو کسان انہیں سبق سکھائیں گےاس طرح بھی سلیم جہانگیر نے کیا ہے۔