جمعیۃ علماء ضلع ناندیڑ کا اک روزہ تربیتی اجلاس

Maharashtra

جمعیۃ علماء ضلع ناندیڑ کا اک روزہ تربیتی اجلاس

مولانا ندیم صدیقی ،مولانا ابراہیم قاسمی ،مفتی عبدالرحمن اشرفی و دیگر کا خطاب  

ناندیڑ ۔16؍ اکتوبر ( پریس ریلیز)جمعیۃ کے اغراض و مقاصد اور اس کے کاز کو دستور اساسی کی روشنی میں عمل در آمد کرنے، عقائدکے تحفظ ،مدارس ومکاتب کی بقاء ،دینی اور عصری تعلیم کی طرف توجہ دینے،خود مکتفی ادارے قائم کر نے ،جمعیۃ کے عہدیدران اپنی اپنی ذمہ داریوں کی طرف بھر توجہ دینے اور تنظیم کی اہمیت و افادیت ہر ایک مسلمان تک پہونچانے کی غرض سےآج یہا ں مدرسہ تجوید القرآن گاڑے گائوں روڈ ناندیڑ میں جمعیۃ علماءضلع ناندیڑ کی تمام یونٹوں کے عہدیداران و اراکین کا اک روزہ اجلاس بصدارت مولانا حافظ محمد ندیم صدیقی صاحب صدر جمعیۃ علماء مہا راشٹر منعقد ہواجس میں بڑی تعداد میں ضلع بھر سے عہدیداران و اراکین اور جمعیتی احباب نے شرکت کی ۔

اس موقع پر صدراجلاس مولانا ندیم صدیقی صاحب نے تحریک آزادی میں جمعیۃ علما ء ہند کا اہم اور بنیادی کردار،تقسیم ہند کی مخالفت ،ملک میں مسلمانوں کے لئے برابری کا حق دینے ،مسلمانو ںکو مایوسی سے نکال کر ہمت و حوصلہ دینے ملک کی سلامتی، کمزور ںکے حق کی لڑائی لڑنےو دیگر دینی ملی رفاہی خدمات پر مفصل روشنی ڈالتے ہوئے فرمایا کہ اس وقت صوبہ مہا راشٹر میں جمعیۃ علماء سے وابستہ اراکین کی تعداد میں خاصہ اضافہ ہوا ہے جو کہ خوش آئند ہے لیکن ان کی تربیت نہ ہونے کی وجہ سے مضبوط طریقے پر جماعت کا کام نہیں ہو پا رہا ہے اس لئے ہم نے تنظیم سے وابستہ لوگوں کی تربیت کے لئے ورکشاپ کا سلسلہ شروع کیا ہے تاکہ جملہ اراکین تنظیم کے کے اغراض و مقاصد اور کام کرنے کے طریقے کو کما حقہ سمجھ سکیں۔مولانا محمد ابراہیم قاسمی صدر جمعیۃ علماء ضلع شولاپور نے جمعیۃ علماء کا لائحہ عمل ،تنظیم کو چلانے کے طریقہ کار، عہدیداروں کی ذمہ داریاں و دیگر تعمیری پرو گراموں پر مفصل  روشنی ڈالتے ہوئے فرمایا کہ ہم مسلمانوں کا سب سے بڑا سر مایہ ایمان ہے ،یہ ذہنی اور فکری ارتدادا کا زمانہ ہے ،اس وقت سب سے اہم مسئلہ عقائد کا ہے جمعیۃ علماء کے اغراض و مقاصد میں سے اہم مقصد ایمان اور عقائد کا تحفظ ہے اس لئے ہمیں مسلمانوں کے ایمان و عقائد کے تحفظ کی ہر ممکن فکر کرنی چاہئے ۔

 مفتی عبد الرحمن اشرفی صاحب ( نائب صدر جمعیۃ علماء مراہٹواڑہ )نے دینی تعلیمی بورڈ کی اہمیت و ضرورت پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ مدارس و مکاتب کے نظام کو مضبوط کر نا ،دینی تعلیمی بیداری مہم چلانا ،جن مساجد اور بستیوں میں مکاتب نہیں ہیں وہاں مکاتب کا نظام قائم کرنا ،تعلیم بالغان کا نظم کر نا ،اسی طرح اسکول و کالجس میں دینی فکروں کے ساتھ قائم کرنا ضروری ہے ۔ اجلاس کا آغازقاری محمد انعام الحسن صاحب کی تلاوت قرآن کریم اورحافظ محمد فیضان کے نعتیہ کلام سے ہوا ۔مولانا محمد عثمان فیصل قاسمی ( صدر جمعیۃ علماء ضلع ناندیڑ ) نے اپنے تمہیدی خطاب میںناندیڑ میں تربیتی پروگرام منعقد کر نے کی وجہ ،اس کی ضرورت پر تبادلہ خیال کرتے ہوئے کہا کہ ان اکابر علماء کے ذریعہ تربیت حاصل کرنے کے بعد ہم جو کام کریں گےوہ بہت عمدہ ہوگا اس لئے کام سیکھنا بھی چاہئے اور کام کا طریقہ کار معلوم کرنا چاہئے اس وقت ملک کے حالات صحیح نہیں ہیں اس لئے بہت فکر مندی  سےکام کرنے کی ضرورت ہے۔

 قاری شمس الحق قاسمی صاحب ( جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء مراہٹواڑہ ) نے اصلاح معاشرہ و سیرۃ النبی ﷺ تحریک پر توجہ دینے، مسلم بچیوں کے ار تداد، سما ج ومعاشرہ کے اصلاح کی ضرورت اور اسکے طریقہ کار پر روشنی ڈالی ۔اخیر میں بزرگ عالم دین مولانا حبیب الرحمن قاسمی صاحب ( صدر جمعیۃ علماء مراہٹواڑہ )کے مختصر ناصحانہ کلمات اور دعاء پر اجلاس کا اختتام عمل میں آیا۔اجلاس کو کامیاب بنانے میں قاری محمد اسعد صاحب خازن جمعیۃ علماء ضلع ناندیڑ ، مفتی محمدایوب امام مسجد وزیر آباد و سکریٹری اصلاح معاشرہ جمعیۃ علماء مراہٹواڑہ ، مولانا آصف ندوی شہر صدر جمعیۃ علماء ناندیڑ ،مسعود بھائی عثمان آباد سکریٹری جمعیۃ علماء مراہٹواڑہ ، عبدالرحیم خان جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء ضلع ناندیڑ، سلیم دیشمکھ نائب صدر جمعیۃ علماء ضلع ناندیڑ،شعیب ہیپی کلب جنرل سکریٹری جمعیۃ علماء شہر ناندیڑ و دیگر نے اہم رول ادا کیا ۔